14

تو ہے یا تیرا سایا ہے

تو ہے یا تیرا سایا ہے

بھیس جدائی نے بدلا ہے

دل کی حویلی پر مدت سے

خاموشی کا قفل پڑا ہے

چیخ رہے ہیں خالی کمرے

شام سے کتنی تیز ہوا ہے

دروازے سر پھوڑ رہے ہیں

کون اس گھر کو چھوڑ گیا ہے

تنہائی کو کیسے چھوڑوں

برسوں میں اک یار ملا ہے

رات اندھیری ناؤ نہ ساتھی

رستے میں دریا پڑتا ہے

ہچکی تھمتی ہی نہیں ناصرؔ

آج کسی نے یاد کیا ہے

ناصر کاظمی

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں